تفسیر سورۃالاعراف آیت ۱۳۳تا ۱۳۵ ۔ فَاَرْسَلْنَا عَلَیْہِمُ الطُّوْفَانَ وَالْجَرَادَ وَالْقُمَّلَ وَالضَّفَادِعَ وَالدَّمَ اٰیٰتٍ مُّفَصَّلٰتٍ

عذاب آنے پرگستاخ توبہ کاوعدہ کرتے مگرپھر مکرجاتے ہیں

{فَاَرْسَلْنَا عَلَیْہِمُ الطُّوْفَانَ وَالْجَرَادَ وَالْقُمَّلَ وَالضَّفَادِعَ وَالدَّمَ اٰیٰتٍ مُّفَصَّلٰتٍ فَاسْتَکْبَرُوْا وَکَانُوْا قَوْمًا مُّجْرِمِیْنَ }(۱۳۳){وَلَمَّا وَقَعَ عَلَیْہِمُ الرِّجْزُ قَالُوْا یٰمُوْسَی ادْعُ لَنَا رَبَّکَ بِمَا عَہِدَ عِنْدَکَ لَئِنْ کَشَفْتَ عَنَّا الرِّجْزَ لَنُؤْمِنَنَّ لَکَ وَلَنُرْسِلَنَّ مَعَکَ بَنِیْٓ اِسْرٰٓء ِیْلَ }(۱۳۴){فَلَمَّا کَشَفْنَا عَنْہُمُ الرِّجْزَ اِلٰٓی اَجَلٍ ہُمْ بَالِغُوْہُ اِذَا ہُمْ یَنْکُثُوْنَ }(۳۵)
ترجمہ کنزالایمان:تو بھیجا ہم نے ان پر طوفان اور ٹیٹری اور گھن (یا کلنی یا جوئیں )اور مینڈک اور خون جدا جدا نشانیاں تو انہوں نے تکبر کیا اور وہ مجرم قوم تھی۔اور جب ان پر عذاب پڑتا کہتے اے موسیٰ ہمارے لیے اپنے رب سے دعا کرو اس عہد کے سبب جو اس کا تمہارے پاس ہے بیشک اگر تم ہم پر سے عذاب اٹھادو گے تو ہم ضرور تم پر ایمان لائیں گے اور بنی اسرائیل کو تمہارے ساتھ کردیں گے۔

پھر جب ہم ان سے عذاب اٹھالیتے ایک مدت کے لیے جس تک انہیں پہنچنا ہے جبھی وہ پھر جاتے۔
ترجمہ ضیاء الایمان:تو ہم نے ان پر طوفان اور ٹڈی اورپِسُویا جوئیں اور مینڈک اور خون کی جدا جدا نشانیاں بھیجیں تو انہوں نے تکبر کیا اور وہ جرم کرنے والی قوم تھی۔ :اور جب ان پر عذاب پڑتا کہتے اے موسیٰ ہمارے لیے اپنے رب سے دعا کرو اس عہد کے سبب جو اس کا تمہارے پاس ہے بیشک اگر تم ہم پر سے عذاب اٹھادو گے تو ہم ضرور تم پر ایمان لائیں گے اور بنی اسرائیل کو تمہارے ساتھ کردیں گے۔پھر جب ہم ان سے اس مدت تک کے لئے عذاب اٹھالیتے جس تک انہیں پہنچنا تھا تو وہ فوراً (اپنا عہد)توڑ دیتے۔

مختلف عذابوں کی تفصیل

(فَأَرْسَلْنَا عَلَیْہِمُ الطُّوفَانَ) قَالَ ابن عباس وَسَعِیدُ بْنُ جُبَیْرٍ وَقَتَادَۃُ وَمُحَمَّدُ بْنُ إِسْحَاقَ دَخَلَ کَلَامُ بَعْضِہِمْ فِی بَعْضٍ :لَمَّا آمَنَتِ السَّحَرَۃُ، وَرَجَعَ فِرْعَوْنُ مَغْلُوبًا، أَبَی ہُوَ وَقَوْمُہُ إِلَّا الْإِقَامَۃَ عَلَی الْکُفْرِ وَالتَّمَادِی فِی الشَّرِّ، فَتَابَعَ اللَّہُ عَلَیْہِمُ الْآیَاتِ وَأَخَذَہُمْ بِالسِّنِینَ وَنَقَصٍ مِنَ الثَّمَرَاتِ، فَلَمَّا عَالَجَ مِنْہُمْ بِالْآیَاتِ الْأَرْبَعِ:الْعَصَا، وَالْیَدِ، وَالسِّنِینَ،وَنَقْصِ الثِّمَارِ، فَأَبَوْا أَنْ یُؤْمِنُوا فَدَعَا عَلَیْہِمْ، فَقَالَ: یَا رَبِّ إِنَّ عَبْدَکَ فِرْعَوْنَ عَلَا فِی الْأَرْضِ وَبَغَی وَعَتَا وَإِنَّ قَوْمَہُ قَدْ نَقَضُوا عَہْدَکَ، رَبِّ فَخُذْہُمْ بِعُقُوبَۃٍ تَجْعَلُہَا لَہُمْ نِقْمَۃً وَلِقَوْمِی عِظَۃً وَلِمَنْ بَعْدَہُمْ آیَۃً وَعِبْرَۃً، فَبَعَثَ اللَّہُ عَلَیْہِمُ الطُّوفَانَ، وَہُوَ الْمَاء ُ، أَرْسَلَ اللَّہُ عَلَیْہِمُ الْمَاء َ وَبُیُوتُ بَنِی إِسْرَائِیلَ وَبُیُوتُ الْقِبْطِ مُشْتَبِکَۃٌ مُخْتَلِطَۃٌ، فَامْتَلَأَتْ بُیُوتُ الْقِبْطِ حَتَّی قَامُوا فِی الْمَاء ِ إِلَی تَرَاقِیہِمْ وَمَنْ جَلَسَ مِنْہُمْ غَرِقَ، وَلَمْ یَدْخُلْ بُیُوتَ بَنِی إِسْرَائِیلَ مِنَ الْمَاء ِ قَطْرَۃٌ، وَرَکَدَ الْمَاء ُ عَلَی أَرْضِہِمْ لَا یَقْدِرُونَ أَنْ یَحْرُثُوا وَلَا یَعْمَلُوا شَیْئًا، وَدَامَ ذَلِکَ عَلَیْہِمْ سَبْعَۃَ أَیَّامٍ مِنَ السَّبْتِ إِلَی السَّبْتِ وَقَالَ مُجَاہِدٌ وَعَطَاء ٌ:الطُّوفَانُ الْمَوْتُ وَقَالَ وَہْبٌ: الطُّوفَانُ الطَّاعُونُ بِلُغَۃِ الْیَمَنِ، وَقَالَ أَبُو قِلَابَۃَ: الطُّوفَانُ الْجُدَرِیُّ، وَہُمْ أَوَّلُ مَنْ عُذِّبُوا بِہِ فَبَقِیَ فِی الْأَرْضِ.وَقَالَ مُقَاتِلٌ:الطُّوفَانُ الْمَاء ُ طَغَی فَوْقَ حُرُوثِہِمْ.وَرَوَی ابْنُ ظَبْیَانَ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ قَالَ:الطُّوفَانُ أَمْرٌ مِنَ اللَّہِ طَافَ بِہِمْ، ثُمَّ قَرَأَ (فَطَافَ عَلَیْہَا طَائِفٌ مِنْ رَبِّکَ وَہُمْ نَائِمُونَ) (الْقَلَمُّ:۱۹)وَقَالَ أَہْلُ الْبَصْرَۃِ: ہُوَ جَمْعٌ، وَاحِدُہَا طُوفَانَۃٌ، فَقَالَ لِمُوسَی ادْعُ لَنَا رَبَّکَ یَکْشِفُ عَنَّا الْمَطَرَ فَنُؤْمِنُ بِکَ وَنُرْسِلُ مَعَکَ بَنِی إِسْرَائِیلَ، فَدَعَا رَبَّہُ فَرَفَعَ عَنْہُمُ الطُّوفَانَ، فَأَنْبَتَ اللَّہُ لَہُمْ فِی تِلْکَ السَّنَۃِ شیئا لم ینتبہ لَہُمْ قَبْلَ ذَلِکَ مِنَ الْکَلَأِ وَالزَّرْعِ وَالثَّمَرِ وَأَخْصَبَتْ بِلَادُہُمْ، فَقَالُوا: مَا کَانَ ہَذَا الْمَاء ُ إِلَّانِعْمَۃً عَلَیْنَا وَخِصْبًا، فَلَمْ یُؤْمِنُوا وَأَقَامُوا شَہْرًا فِی عَافِیَۃٍ، فَبَعَثَ اللَّہُ عَلَیْہِمُ الْجَرَادَ فَأَکَلَ عَامَّۃَ زُرُوعِہِمْ وَثِمَارِہِمْ وَأَوْرَاقِ الشَّجَرِ حَتَّی کَانَتْ تَأْکُلُ الْأَبْوَابَ وَسُقُوفَ الْبُیُوتِ وَالْخَشَبِ وَالثِّیَابِ وَالْأَمْتِعَۃِ وَمَسَامِیرِ الْأَبْوَابِ مِنَ الْحَدِیدِ حَتَّی تَقَعَ دُورُہُمْ، وَابْتُلِیَ الْجَرَادُ بِالْجُوعِ، فَکَّانِ لَا یَشْبَعُ وَلَمْ یُصِبْ بَنِی إِسْرَائِیلَ شَیْء ٌ مِنْ ذَلِکَ فَعَجُّوا وَضَجُّوا، وَقَالُوا:یَا مُوسَی ادْعُ لَنَا رَبَّکَ لَئِنْ کَشَفْتَ عَنَّا الرِّجْزَ لَنُؤْمِنَنَّ لَکَ، وَأَعْطَوْہُ عَہْدَ اللَّہِ وَمِیثَاقَہُ، فَدَعَا مُوسَی عَلَیْہِ السَّلَامُ فَکَشَفَ اللَّہُ عَنْہُمُ الْجَرَادَ بَعْدَمَا أَقَامَ عَلَیْہِ سَبْعَۃَ أَیَّامٍ مِنَ السَّبْتِ إِلَی السَّبْتِ.وَفِی الْخَبَر:مَکْتُوبٌ عَلَی صَدْرِ کُلِّ جَرَادَۃٍ جُنْدُ اللَّہِ الْأَعْظَمِ)وَیُقَالُ إِنَّ مُوسَی بَرَزَ إِلَی الْفَضَاء ِ فَأَشَارَ بِعَصَاہُ نَحْوَ الْمَشْرِقِ وَالْمَغْرِبِ فَرَجَعَتِ الْجَرَادُ مِنْ حَیْثُ جَاء َتْ، وَکَانَتْ قَدْ بَقِیَتْ مِنْ زُرُوعِہِمْ وَغَلَّاتِہِمْ بَقِیَّۃٌ، فَقَالُوا:قَدْ بَقِیَ لَنَا مَا ہُوَ کَافِینَا فَمَا نَحْنُ بِتَارِکِی دِینِنَا، فَلَمْ یَفُوا بِمَا عَاہَدُوا، وَعَادُوا لِأَعْمَالِہِمِ السُّوء ِ،فَأَقَامُوا شَہْرًا فِی عَافِیَۃٍ، ثُمَّ بَعَثَ اللَّہُ عَلَیْہِمُ الْقُمَّلَ(وَاخْتَلَفُوا فِی الْقُمَّلِ)فَرَوَی سَعِیدُ بْنُ جُبَیْرٍ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ قَالَ:الْقُمَّلُ السُّوسُ الَّذِی یَخْرُجُ مِنَ الْحِنْطَۃِوَقَالَ مُجَاہِدٌ وَالسُّدِّیُّ وَقَتَادَۃُ وَالْکَلْبِیُّ: الْقُمَّلُ الدَّبَی وَالْجَرَادُ الطَّیَّارَۃُ الَّتِی لَہَا أَجْنِحَۃٌ، وَالدَّبَی الصِّغَارُ الَّتِی لَا أَجْنِحَۃَ لَہَاوَقَالَ (عِکْرِمَۃُ:ہِیَ بَنَاتُ)الْجَرَادِوَقَالَ أَبُو عُبَیْدَۃَ: وَہُوَ الْحَمْنَانُ وَہُوَ ضَرْبٌ مِنَ الْقُرَادِوقال عطاء الخرسانی:ہُوَ الْقُمَّلُ وَبِہِ قَرَأَ أَبُو الْحَسَنِ (الْقَمْلُ)بِفَتْحِ الْقَافِ وَسُکُونِ الْمِیمِ قَالُوا: أَمَرُ اللَّہُ مُوسَی أَنْ یَمْشِیَ إِلَی کَثِیبٍ أَعْفَرَ، بِقَرْیَۃٍ مِنْ قُرَی مِصْرَ تُدْعَی عَیْنَ الشَّمْسِ، فَمَشَی مُوسَی إِلَی ذَلِکَ الْکَثِیبِ وَکَانَ أَہْیَلُ فَضَرَبَہُ بِعَصَاہُ فَانْثَالَ عَلَیْہِمُ الْقَمْلُ، فَتَتَبَّعَ مَا بَقِیَ مِنْ حروثہم وأشجارہم وبناتہم فَأَکَلَہُ، وَلَحَسَ الْأَرْضَ کُلَّہَا وَکَانَ یَدْخُلُ بَیْنَ ثَوْبِ أَحَدِہِمْ وَجِلْدِہِ فَیَعُضُّہُ، وَکَانَ أَحَدُہُمْ یَأْکُلُ الطَّعَامَ فَیَمْتَلِئُ قَمْلًا.قَالَ سَعِیدُ بْنُ الْمُسَیِّبِ: الْقُمَّلُ السُّوسُ الَّذِی یَخْرُجُ مِنَ الْحُبُوبِ، وَکَانَ الرَّجُلُ یُخْرِجُ عَشْرَۃَ أَجْرِبَۃٍ إِلَی الرَّحَا فَلَا یَرُدُّ مِنْہَا ثَلَاثَۃَ أَقْفِزَۃٍ، فَلَمْ یُصَابُوا بِبَلَاء ٍ کَانَ أَشَدَّ عَلَیْہِمْ مِنَ الْقَمْلِ، وَأَخَذَ أَشْعَارَہُمْ وَأَبْشَارَہُمْ وَأَشْفَارَ عُیُونِہِمْ وَحَوَاجِبِہِمْ وَلَزِمَ جُلُودَہُمْ کَأَنَّہُ الْجُدَرِیُّ عَلَیْہِمْ وَمَنَعَہُمُ النَّوْمَ وَالْقَرَارَ فَصَرَخُوا وَصَاحُوا إِلَی مُوسَی أَنَّا نَتُوبُ فَادْعُ لَنَا رَبَّکَ یَکْشِفْ عَنَّا الْبَلَاء َ، فَدَعَا مُوسَی عَلَیْہِ السَّلَامُ اللَّہَ فَرَفَعَ اللَّہُ الْقَمْلَ عَنْہُمْ بَعْدَمَا أَقَامَ عَلَیْہِمْ سَبْعَۃَ أَیَّامٍ مِنَ السَّبْتِ إِلَی السَّبْتِ، فَنَکَثُوا وَعَادُوا إِلَی أَخْبَثِ أَعْمَالِہِمْ وَقَالُوا:مَا کُنَّا قَطُّ أَحَقَّ أَنْ نَسْتَیْقِنَ أَنَّہُ سَاحِرٌ مِنَّا الْیَوْمَ یَجْعَلُ الرَّمْلَ دَوَابَّ. فَدَعَا مُوسَی بَعْدَمَا أَقَامُوا شَہْرًا فِی عَافِیَۃٍ، فَأَرْسَلَ اللَّہُ عَلَیْہِمُ الضَّفَادِعَ فَامْتَلَأَتْ مِنْہَا بُیُوتُہُمْ وَأَفْنِیَتُہُمْ وَأَطْعِمَتُہُمْ وَآنِیَتُہُمْ، فَلَا یَکْشِفُ أَحَدٌ إِنَاء ً وَلَا طَعَامًا إِلَّا وَجَدَ فِیہِ الضَّفَادِعَ، وَکَانَ الرَّجُلُ یَجْلِسُ فِی الضَّفَادِعِ إِلَی ذَقْنِہِ، وَیَہُمُّ أَنْ یَتَکَلَّمَ فَیَثِبُ الضُّفْدَعُ فِی فِیہِ، وَکَانَتْ تَثِبُ فِی قُدُورِہِمْ فَتُفْسِدُ عَلَیْہِمْ طَعَامَہُمْ وَتُطْفِئُ نِیرَانَہُمْ، وَکَانَ أَحَدُہُمْ یَضْطَجِعُ فَتَرْکَبُہُ الضَّفَادِعُ فَتَکُونُ عَلَیْہِ رُکَامًا حَتَّی مَا یَسْتَطِیعُ أَنْ یَنْصَرِفَ إِلَی شَقِّہِ الْآخَرِ، وَیَفْتَحُ فَاہُ لِأَکْلَتِہِ فَیَسْبِقُ الضُّفْدَعُ أَکْلَتَہُ إِلَی فِیہِ، وَلَا یَعْجِنُ عَجِینًا إِلَّا تَشَدَّخَتْ فِیہِ، وَلَا یَفْتَحُ قِدْرًا إِلَّا امْتَلَأَتْ ضَفَادِعَ، فَلَقُوا مِنْہَا أَذًی شَدِیدًا.رَوَی عِکْرِمَۃُ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ قَالَ: کَانَتِ الضَّفَادِعُ بَرِّیَّۃً، فَلَمَّا أَرْسَلَہَا اللَّہُ عَلَی آلِ فِرْعَوْنَ سَمِعَتْ وَأَطَاعَتْ فَجَعَلَتْ تَقْذِفُ أَنْفُسَہَا فِی الْقُدُورِ وَہِیَ تَغْلِی، وَفِی التَّنَانِیرِ وَہِیَ تَفُورُ، فَأَثَابَہَا اللَّہُ بِحُسْنِ طَاعَتِہَا بِرْدَ الْمَاء ِ، فَلَمَّا رَأَوْا ذَلِکَ بَکَوْا وَشَکَوْا ذَلِکَ إِلَی مُوسَی، وَقَالُوا ہَذِہِ الْمَرَّۃُ نَتُوبُ وَلَا نَعُودُ، فَأَخَذَ عُہُودَہُمْ وَمَوَاثِیقَہُمْ، ثُمَّ دَعَا رَبَّہُ فَکَشَفَ عَنْہُمُ الضَّفَادِعَ بَعْدَمَا أَقَامَ سَبْعًا مِنَ السَّبْتِ إِلَی السَّبْتِ، فَأَقَامُوا شَہْرًا فِی عَافِیَۃٍ ثُمَّ نَقَضُوا الْعَہْدَ وَعَادُوا لِکُفْرِہِمْ، فَدَعَا عَلَیْہِمْ مُوسَی فَأَرْسَلَ اللَّہُ عَلَیْہِمُ الدَّمَ، فَسَالَ النِّیلُ عَلَیْہِمْ دَمًا وَصَارَتْ مِیَاہُہُمْ دَمًا وَمَا یَسْتَقُونَ مِنَ الْآبَارِ وَالْأَنْہَارِ إِلَّا وَجَدُوہُ دَمًا عَبِیطًا أَحْمَرَ، فَشَکَوَا إِلَی فِرْعَوْنَ وَقَالُوا لَیْسَ لَنَا شَرَابٌ، فَقَالَ: إِنَّہُ سَحَرَکُمْ، فَقَالُوا: مِنْ أَیْنَ سَحَرَنَا وَنَحْنُ لَا نَجِدُ فِی أَوْعِیَتِنَا شَیْئًا مِنَ الْمَاء ِ إِلَّا دَمًا عَبِیطًا؟ وَکَانَ فِرْعَوْنُ یَجْمَعُ بَیْنَ الْقِبْطِیِّ وَالْإِسْرَائِیلِیِّ عَلَی الْإِنَاء ِ الْوَاحِدِ فَیَکُونُ مَا یَلِی الْإِسْرَائِیلِیَّ مَاء ٌ وَالْقِبْطِیَّ دَمًا (وَیَقُومَانِ إِلَی الْجَرَّۃِ فِیہَا الْمَاء ُ فَیَخْرُجُ لِلْإِسْرَائِیلِیِّ مَاء ٌ وَلِلْقِبْطِیِّ دَمٌحَتَّی کَانَتِ الْمَرْأَۃُ مِنْ آلِ فِرْعَوْنَ تَأْتِی الْمَرْأَۃَ مِنْ بَنِی إِسْرَائِیلَ حِینَ جَہَدَہُمُ الْعَطَشُ فَتَقُولُ اسْقِنِی مِنْ مَائِکِ فَتَصُبُّ لَہَا مِنْ قِرْبَتِہَا فَیَعُودُ فِی الْإِنَاء ِ دَمًا حَتَّی کَانَتْ تَقُولُ اجْعَلِیہِ فِی فِیکِ ثُمَّ مُجِّیہِ فِی فِیَّ فَتَأْخُذُ فِی فِیہَا مَاء ً فإذا مجَّتہ أفِی فِیہَا صَارَ دَمًا، وَإِنَّ فِرْعَوْنَ اعْتَرَاہُ الْعَطَشُ حَتَّی إِنَّہُ لَیَضْطَرُّ إِلَی مَضْغِ الْأَشْجَارِ الرَّطْبَۃِ، فَإِذَا مَضَغَہَا یَصِیرُ مَاؤُہَا فِی فِیہِ مِلْحًا أُجَاجًا، فَمَکَثُوا فِی ذَلِکَ سَبْعَۃَ أَیَّامٍ لَا یَشْرَبُونَ إِلَّا الدَّمَ قَالَ زَیْدُ بْنُ أَسْلَمَ: الدَّمُ الَّذِی سُلِّطَ عَلَیْہِمْ کَانَ الرُّعَافَ، فَأَتَوْا مُوسَی وَقَالُوا یَا مُوسَی ادْعُ رَبَّکَ یَکْشِفُ عَنَّا ہَذَا الدَّمَ فَنُؤْمِنُ بِکَ وَنُرْسِلُ مَعَکَ بَنِی إِسْرَائِیلَ، فَدَعَا رَبَّہُ عَزَّ وَجَلَّ فَکَشَفَ عَنْہُمْ، فَلَمْ یُؤْمِنُوا۔

ترجمہ :حضرت سیدناعبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما فرماتے ہیں کہ جب جادوگروں کے ایمان لانے کے بعد بھی فرعونی اپنے کفر وسرکشی پر جمے رہے تو اُن پر اللہ تعالی کی نشانیاں پے درپے وارد ہونے لگیں کیونکہ حضرت سیدناموسیٰ علیہ السلام نے دعا کی تھی کہ یااللہ کریم! فرعون زمین میں بہت سرکش ہوگیا ہے اور اس کی قوم نے بھی عہد شکنی کی ہے انہیں ایسے عذاب میں گرفتار کر جو اُن کے لئے سزا ہو اور میری قوم اور بعد والوں کے لئے عبرت و نصیحت ہو، تواللہ تعالیٰ نے طوفان بھیجا ، ہوا یوں کہ بادل آیا، اندھیرا ہوا اور کثرت سے بارش ہونے لگی ۔قبطیوں کے گھروں میں پانی بھر گیا یہاں تک کہ وہ اس میں کھڑے رہ گئے اور پانی اُن کی گردنوں کی ہنسلیوں تک آگیا، اُن میں سے جوبیٹھا وہ ڈوب گیا، یہ لوگ نہ ہل سکتے تھے نہ کچھ کام کرسکتے تھے۔ ہفتہ کے دن سے لے کر دوسرے ہفتہ تک سات روز اسی مصیبت میں مبتلا رہے اور باوجود اس کے کہ بنی اسرائیل کے گھر اُن کے گھروں سے متصل تھے اُن کے گھروں میں پانی نہ آیا۔ جب یہ لوگ عاجز ہوئے تو حضرت سیدناموسیٰ علیہ السلام سے عرض کی:ہمارے لئے دعا فرمائیے کہ یہ مصیبت دور ہو جائے تو ہم آپ پر ایمان لے آئیں گے اور بنی اسرائیل کو آپ کے ساتھ بھیج دیں گے۔ حضرت سیدناموسیٰ علیہ السلام نے دعا فرمائی تو طوفان کی مصیبت دور ہو گئی، زمین میں وہ سرسبزی وشادابی آئی جو پہلے کبھی نہ دیکھی تھی۔ کھیتیاں خوب ہوئیں اور درخت خوب پھلے ۔ یہ دیکھ کر فرعونی کہنے لگے یہ پانی تو نعمت تھا اور ایمان نہ لائے۔ ایک مہینہ تو عافیت سے گزرا ،پھر اللہ تعالیٰ نے ٹڈی بھیجی وہ کھیتیاں اور پھل، درختوں کے پتے، مکان کے دروازے، چھتیں ،تختے، سامان، حتّٰی کہ لوہے کی کیلیں تک کھا گئیں اور قبطیوں کے گھروں میں بھر گئیں لیکن بنی اسرائیل کے یہاں نہ گئیں۔ اب قبطیوں نے پریشان ہو کر پھرحضرت سیدناموسیٰ علیہ السلام سے دعا کی درخواست کی اور ایمان لانے کا وعدہ کیا، اس پر عہد و پیمان کیا ۔سات روز یعنی ہفتہ سے ہفتہ تک ٹڈی کی مصیبت میں مبتلا رہے،پھرحضرت سیدناموسیٰ علیہ السلام کی دعا سے نجات پائی۔ کھیتیاں اور پھل جو کچھ باقی رہ گئے تھے انہیں دیکھ کر کہنے لگے یہ ہمیں کافی ہیں ہم اپنا دین نہیں چھوڑتے چنانچہ ایمان نہ لائے، عہد وفا نہ کیا اور اپنے اعمالِ خبیثہ میں مبتلا ہوگئے ۔ایک مہینہ عافیت سے گزرا ،پھراللہ تعالیٰ نے قُمَّل بھیجے، اس میں مفسرین کا اختلاف ہے بعض کہتے ہیں کہ قُمَّل گُھن ہے، بعض کہتے ہیں جوں ،بعض کہتے ہیں ایک اور چھوٹا سا کیڑا ہے۔ اس کیڑے نے جو کھیتیاں اور پھل باقی رہے تھے وہ کھالئے، یہ کیڑا کپڑوں میں گھس جاتا تھا اور جلد کو کاٹتا تھا، کھانے میں داخل ہوجاتا تھا ،اگر کوئی دس بوری گندم چکی پر لے جاتا تو تین سیر واپس لاتا باقی سب کیڑے کھا جاتے ۔یہ کیڑے فرعونیوں کے بال، بھنویں ،پلکیں چاٹ گئے ،ان کے جسم پر چیچک کی طرح بھر جاتے حتّٰی کہ ان کیڑوں نے اُن کا سونا دشوار کردیا تھا۔ اس مصیبت سے فرعونی چیخ پڑے اور اُنہوں نے حضرت سیدناموسی علیہ السلام سے عرض کی:ہم توبہ کرتے ہیں ، آپ اس بلا کے دور ہونے کی دعا فرمائیے۔ چنانچہ سات روز کے بعد یہ مصیبت بھی حضرت سیدناموسی علیہ السلام کی دعا سے دور ہوئی، لیکن فرعونیوں نے پھر عہد شکنی کی اور پہلے سے زیادہ خبیث تر عمل شروع کر دئیے۔ ایک مہینہ امن میں گزرنے کے بعد پھر حضرت سیدناموسی علیہ السلام نے دعا کی تو اللہ تعالیٰ نے مینڈک بھیجے اور یہ حال ہوا کہ آدمی بیٹھتا تھا تو اس کی مجلس میں مینڈک بھر جاتے، بات کرنے کے لئے منہ کھولتا تو مینڈک کود کر منہ میں چلا جاتا، ہانڈیوں میں مینڈک ،کھانوں میں مینڈک ، چولھوں میں مینڈک بھر جاتے تو آگ بجھ جاتی تھی، لیٹتے تھے تو مینڈک اوپر سوار ہوتے تھے، اس مصیبت سے فرعونی رو پڑے اورحضرت سیدناموسی علیہ السلام سے عرض کی: اب کی بار ہم پکی توبہ کرتے ہیں۔ حضرت موسیٰ عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام نے اُن سے عہد و پیمان لے کر دعا کی تو سات روز کے بعد یہ مصیبت بھی دور ہوئی اور ایک مہینہ عافیت سے گزرا ،لیکن پھر اُنہوں نے عہد توڑ دیا اور اپنے کفر کی طرف لوٹے ۔پھر حضرت سیدناموسی علیہ السلام نے دعا فرمائی تو تمام کنووں کا پانی، نہروں اور چشموں کا پانی، دریائے نیل کا پانی غرض ہر پانی اُن کے لئے تازہ خون بن گیا۔ اُنہوں نے فرعون سے اس کی شکایت کی تو کہنے لگاکہ حضرت سیدناموسی علیہ السلام نے جادو سے تمہاری نظر بندی کردی ہے۔ اُنہوں نے کہا:تم کس نظر بندی کی بات کر رہے ہو؟ ہمارے برتنوں میں خون کے سوا پانی کا نام و نشان ہی نہیں۔ یہ سن کر فرعون نے حکم دیا کہ قبطی بنی اسرائیل کے ساتھ ایک ہی برتن سے پانی لیں۔ لیکن ہوا یوں کہ جب بنی اسرائیل نکالتے توپانی نکلتا ،قبطی نکالتے تو اسی برتن سے خون نکلتا، یہاں تک کہ فرعونی عورتیں پیاس سے عاجز ہو کر بنی اسرائیل کی عورتوں کے پاس آئیں اور اُن سے پانی مانگا تو وہ پانی اُن کے برتن میں آتے ہی خون ہوگیا۔ یہ دیکھ کر فرعونی عورت کہنے لگی کہ تو پانی اپنے منہ میں لے کر میرے منہ میں کلی کردے ۔ مگر جب تک وہ پانی اسرائیلی عورت کے منہ میں رہا پانی تھا، جب فرعونی عورت کے منہ میں پہنچا تو خون ہوجاتا ۔فرعون خود پیاس سے مُضْطَر ہوا تواس نے تر درختوں کی رطوبت چوسی ، وہ رطوبت منہ میں پہنچتے ہی خون ہوگئی۔ سات روز تک خون کے سوا کوئی چیز پینے کی میسر نہ آئی تو پھرحضرت سیدناموسی علیہ السلام سے دعا کی درخواست کی اور ایمان لانے کا وعدہ کیا۔ حضرت سیدناموسی علیہ السلام نے دعا فرمائی یہ مصیبت بھی دور ہوئی مگر وہ ایمان پھر بھی نہ لائے۔ملخصاً۔
(تفسیر البغوی:محیی السنۃ، أبو محمد الحسین بن مسعود البغوی (۳:۲۷۲)

گستاخوں پر حملہ کرنے کے سبب اللہ تعالی کی طرف سے اجر

عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ قَالَ: کَانَتِ الضَّفَادِعُ بَرِّیَّۃٌ فَلَمَّا أَرْسَلَہَا اللَّہُ عَلَی آلِ فِرْعَوْنَ سَمِعَتْ وَأَطَاعَتْ فَجَعَلَتْ تَقْذِفُ نَفْسَہَا فِی الْقِدْرِ وَہِیَ تَغْلِی وَفِی التَنَانِیرِ وَہِیَ نُفُورٌ فَأَثَابَہَا اللَّہُ عَزَّ وَجَلَّ بِحُسْنِ طَاعَتِہَا بَرْدَ الْمَاء ِ۔
ترجمہ :حضرت سیدناعبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہمافرماتے ہیں کہ مینڈک خشکی پررہتے تھے ،جب اللہ تعالی نے حضرت سیدناموسی علیہ السلام کے گستاخوں کی طرف ان کو بھیجا، تو انھوں نے اللہ تعالی کاحکم سنتے ہی اطاعت کی ، پھرکبھی اپنے آپ کوابلتی ہنڈیامیں پھینک دیتااورکبھی جلتے ہوئے تندورمیں ڈال دیتاحالانکہ وہ جوش ماررہے ہوتے تھے تواللہ تعالی نے اس کی اس حسین فرمانبرداری اوراطاعت کی جزاء کے طورپراسے ٹھنڈے پانی کی ٹھنڈک عطافرمائی ۔
(تفسیر القرآن العظیم لابن أبی حاتم:أبو محمد عبد الرحمن بن محمد بن إدریس بن المنذر التمیمی، الحنظلی(۵:۱۵۴۸)
اس سے معلوم ہواکہ اگرمینڈک بھی انبیا ء کرام علیہم السلام کے گستاخوں کے خلاف اٹھ کھڑاہوتواللہ تعالی اس کو اجرسے محروم نہیں کرتاتواگرکوئی مسلمان حضورتاجدارختم نبوتﷺکی عزت وناموس کی خاطرقربانی دے گاتوکیااللہ تعالی اسے اجرسے محروم کردے گا؟۔

Leave a Reply