قبرستان کا پیسہ مسجد میں لگانا کیسا ہے؟

قبرستان کا پیسہ مسجد میں لگانا کیسا ہے؟

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

کیا فرماتے ہیں علمائے دین ومفتیان کرام اس مسئلہ کے بارے میں کی قبرستان کا پیسہ مسجد میں لگانا کیسا ہے جواب عنایت فرمائیں کرم ہوگا

ســـائل : محـمـد وارث رضـا خـان جـامی

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

وعلیکم السلام ورحمۃاللہ وبرکاتہ

بسـم اللـہ الرحمٰـن الرحیم

الجــوابـــــــــــ بعون الملک الوہاب

صورت مسؤلہ میں قبرستان کا( وقف کردہ ) پیسہ مسجد میں لگانا جائز نہیں ہے۔

جیسا الاشباہ والنظائر میں ہے

"شرط الواقف کنص الشارع ای فی وجوب العمل بہ۔

واقف کی شرط نص شارع علیہ السلام کی طرح واجب العمل ہے۔

اس قاعدۂ کلیہ شرعیہ کا واضح مطلب یہ ہے کہ وقف کرنے والے نے جس غرض کے لیے شی کو وقف کیا ہے اس کے غیر میں شیٔ موقوف کا استعمال ہرگز درست نہیں ہے۔

(الاشباہ والنظائر،ص،١٩٥)

فتاوی عالمگیری میں ہے "لایجوز تغیر الواقف عن ھیئتہ فلا یجعل الدار بستانا و لا الخان حماما ولا الرباط دکانا”

(بحوالہ فتاوی علیمیہ ج،٢ص،٥١٧)

اور ایسا ہی (فتاوی رضویہ،ج٤،ص،١١٧-١١٠

الانتباہ:– قبرستان کا پیسہ وقف شدہ نہیں ہے۔ تو دینے والے کی اجازت سے مسجد میں لگانا درست ہے،

واللــہ تــــــعالیٰ اعلـم بالصــواب

حضرت علامہ مولانا محمد منظـــور عالم قادری صـاحب قبلہ مدظلہ العالی والنورانی

کتبـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــہ

استاد دارالعلوم اہلسنت معین الاسلام چھتونہ میگھولی کلاں مہراجگنج (یوپی)

Leave a Reply

%d bloggers like this: