اذان کے درمیان بات کرنا کیسا ہے؟

اذان کے درمیان بات کرنا کیسا ہے؟

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ اگر اذان کے درمیان کچھ بھی بات کی جائے تو شریعت کی طرف سے کیا حکم ہے ؟حوالہ کے ساتھ جواب عنایت فرمائیں ۔

ســـائل : مـحمـد مونـس رضـا واحـدی پلیا کلاں

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

وعلیکم السلام ورحمۃاللہ وبرکاتہ

بسـم اللــہ الرحمٰـن الرحیـم

الجــوابـــــــــــــــــــــــــــــــــــ بعون الملک الوہاب

حضور صدر الشریعہ بدر الطریقہ حضرت علامہ مفتی محمد امجد علی علیہ الرحمہ درمختار،عالمگیری وفتاویٰ رضویہ کے حوالے سے تحریر فرماتے ہیں کہ (مسئلہ٥٧) جب اذان ہو تواتنی دیر کیلئے سلام وکلام اورجواب سلام اورتمام کام موقوف کردے یہاں تک کہ تلاوت بھی، اذان کو غور سے سنے اورجوا ب دے ۔ یونہی اقامت میں ۔

(بہارِ شریعت ج۱ص٤٧٣، درمختار ج٢،ص،٨١ عالمگیری)

(٣) جواذان کے وقت باتوں میں مشغول رہے اس کا معاذ اللہ خاتمہ براہونے کا خوف ہے ۔ (بہار شریعت ج۱ص٤۷۳)”بحوالہ فتاوی رضویہ،

واللــہ تــــــعالیٰ اعلـم بالصــواب

حضرت علامہ مولانا محمد منظور عالم قادری صاحب قبلہ

کتبــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــہ 

خادم؛۔ دار العلوم اہلسنت معین الاسلام چھتونہ مہراجگنج (یوپی)

Leave a Reply

%d bloggers like this: